ہمیشہ خوشبو کا استعمال کرو غیر شادی افراد مت پڑھیں“

”شادی سے پہلے باپ کی بیٹے کو دس نصیحتیں خاص ایام میں نزدیک مت جاؤ ہمیشہ خوشبو کا استعمال کرو غیر شادی افراد مت پڑھیں“

عورت ایک مرد کی محبت میں سب کا بھروسہ توڑدیتی ہے اور پھر جب مرد کا دل بھر جاتا ہے تو پھر وہ عورت کے منہ پرایسا تمانچہ مارتاہے کہ پھر وہ کسی پر اعتبار نہیں کرتی۔ جب کوئی عورت یہ کہے اس دنیا کے سارے مرد برے اور بے وفا ہیں اس کا یہ مطلب ہرگز نہیں ہوتا اس نے دنیا کے سارے مردوں کو آزما لیا ہے بلکہ اس کامطلب یہ ہوتاہے. کہ اس نے جس شخص کو آزمایاوہ اکیلا اس کے لیے پوری دنیا تھا۔ امام احمد ابن حنبل ؒ کی اپنے بیٹے کو خوشگوار ازدواجی زندگی کےلیے دس قیمتی نصیحتیں ۔امام احمد ابن حنبل ؒ کی اپنے بیٹے کو شادی کی رات دس نصیحتیں کیں۔بیٹا تم گھر کا سکون حاصل نہیں کرسکتے ۔ جب تک کہ اپنی بیوی کے معاملے میں ان دس عادتوں کو نہ اپناؤ لہذا ان کو غور سے سنو اور عمل کاارادہ کرو۔پہلی دو تو یہ کہ عورتیں تمہاری توجہ چاہتی ہیں اور چاہتی ہیں کہ تم ان سے واضح الفاظ میں محبت کا اظہار کرتے رہو۔ لہذا وقتاً فوقتاً اپنی بیوی کو اپنی محبت کا احساس دلاتے رہو اورواضح الفا ظ میں اس کو بتاؤ کہ وہ تمہارے لیے کس قدر اہم اور محبوب ہے اس گمان میں نہ رہو کہ وہ خود سمجھ جائے گی، رشتوں کو اظہار کی ضرورت ہمیشہ رہتی ہے ، یادرکھو! اگر تم نے اس اظہار میں کنجوسی سے کام لیاتو تم دونوں کے درمیان ایک تلخ دراڑ آجائے گی جو وقت کے ساتھ بڑھتی رہے گی اور محبت کو ختم کردے گی۔ہر عورت پر جسمانی کمزوری کے کچھ ایا م آتے ہیں ان ایام میں اللہ پاک نے بھی اس کو عبادات میں چھوٹ دی ہے ، اس کی نمازیں معاف کردی ہیں. اور اس کو روزوں میں اس وقت تک تاخیر کی اجازت دی ہے جب تک وہ دوبارہ صحت یاب نہ ہوجائے ۔ بس ان ایام میں تم اس کے ساتھ ویسے ہی مہربان رہنا جیسے اللہ پاک نے اس پر مہربانی کی ہےجس طرح اللہ نے اس سے عبادات ہٹا لیں ویسے ہی تم بھی ان ایام میں اس کی کمزوری کا لحاظ رکھتے ہوئے س کی ذمہ داریوں میں کمی کردو، اس کے کام کاج میں مدد کرادو اور اس کے لیے سہولت پیدا کرو۔ شوہر کی ناقدری اور ناشکر اکثر عورتوں کی فطرت ہوتی ہےاگر ساری عمر بھی اس پر نوازشیں کرتے رہو لیکن کبھی کوئی کمی رہ گئی توہ وہ یہی کہے گی تم نے میری کونسی بات سنی ہے آج تک لہذا اس کی فطرت سے زیادہ پریشان منت ہونا اور نہ ہی اس کی وجہ سے اس سے محبت میں کمی کرنا۔ عورتوں کو سخت مزاج اورضرورت سے زیادہ محتاط مردوں سے کوفت ہوتی ہے لیکن وہ نرم مزاج مرد کی نرمی کا بے جا فائدہ اٹھانا بھی جانتی ہیں لہذا ان دونوں صفات میں اعتدال سے کام لینا تاکہ گھر میں توازن قائم رہے اور تم دونوں کو ذہنی سکون حاصل ہوعورتیں اپنے شوہر سے وہی توقع رکھتی ہیں جو شوہر اپنی بیوی سے رکھتا ہے یعنی عزت، محبت بھر ی باتیں ، ظاہر ی جمال ، صاف ستھرا لباس اور خوشبودار جسم لہذا ہمیشہ اس کا خیال رکھنا۔ یادرکھو!گھر کی چار دیواری عورت کی سلطنت ہے ، جب وہ وہاں ہوتی ہتو گویا اپنی مملکت کے تخت پربیٹھی ہوتی ہے اس کی اس سلطنت میں بے جا مداخلت ہرگز نہ کرنا اور اس کا تخت چھیننے کی کوشش نہ کرنا جس حد تک ممکن ہوگھر کے معاملات اس کے سپرد کرنا اور اس میں تصرف کی اس کو آزادی دینا۔

Sharing is caring!

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *