پابندی عائد کرنے کا فیصلہ

پنجاب کے تمام پارکس میں ٹک ٹاکرز کے داخلے پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ

لاہور( 23 اگست2021ء) پنجاب کے تمام پارکس میں ٹک ٹاکرز کے داخلے پر پابندی عائد کرنے کا فیصلہ ، مردوں کے بنا فیملی کے پارکس میں داخلے پر بھی پابندی عائد کرنے کا فیصلہ، اسکولوں اور کالجوں کے یونیفارم والے طلباء کو بھی پارکوں میں داخل ہونے کی اجازت نہیں ہوگی۔ تفصیلات کے مطابق 14 اگست کو لاہور کے مختلف پبلک پارکس میں خواتین کو ہراسگی کا نشانہ بنائے جانے کے واقعات سامنے آنے کے بعد پنجاب حکومت نے صوبے کے تمام پارکس میں ٹک ٹاکرز کے داخلے پر پابندی کا فیصلہ کر لیا ہے ۔میڈیا رپورٹس کے مطابق پابندی کے تحت یوٹیوبرز اور ٹک ٹاکرز پارکس میں آکر کسی قسم کی ویڈیو نہیں بنا سکیں گے، صرف قومی میڈیا کو پبلک پارکس میں ویڈیو بنانے کی اجازت دی جائے گی۔مزید بتایا گیا ہے کہ سوشل میڈیا کیلئے ویڈیو بنانے کیلئے پیشگی اجازت حاصل کرنا ہوگی، پارکس میں تعینات سکیورٹی اہلکار ٹک ٹاکرز اور یوٹیوبرز پر نظر رکھیں گے۔پارکس میں خواتین کو تحفظ فراہم کرنے کیلئے ٹک ٹاکرز پر پابندی عائد کرنے کے علاوہ مزید اقدامات بھی اٹھانے کا فیصلہ کیا گیا ہے۔ پنجاب حکومت نے تمام بڑے پارکس میں مردوں کے فیملی کے بغیر داخلے پر بھی پابندی عائد کرنے کا فیصلہ کیا ہے جب کہ اسکولوں اور کالجوں کے یونیفارم والے طلباء کو پارکوں میں جانے کی اجازت نہیں ہوگی۔ بتایا گیا ہے کہ ان تمام فیصلوں کا اطلاق وزیرِاعلیٰ پنجاب عثمان بزدار کی جانب سے حتمی منظوری دیے جانے کے بعد ہی ہو گا۔ دوسری جانب ہائی کورٹ نے ٹک ٹاک پر پابندی کا معاملہ وفاقی کابینہ کے سامنے رکھنے کا حکم دے دیا۔اسلام آباد ہائی کورٹ کے چیف جسٹس اطہر من اللہ نے ٹک ٹاک پر پابندی کے خلاف درخواست پر سماعت کی۔ عدالت عالیہ نے پی ٹی اے کے وکیل سے استفسار کیا کہ ٹک ٹاک اس وقت ملک بھر میں کھلا ہے یا بند جس پر پی ٹی اے کے وکیل نے کہا کہ ملک میں پروکسی کے ذریعے تقریباً 99 فیصد ٹک ٹاک کھلا ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.