پاکستان کو ریڈ لسٹ سے کب نکالا جائے

پاکستان کو ریڈ لسٹ سے کب نکالا جائے، برطانوی حکومت لاعلم

لندن (مرتضیٰ علی شاہ) برطانوی حکومت اس بات سے لاعلم ہے کہ پاکستان سے سفری پابندیاں ختم کرکے کب اسے ریڈ لسٹ سے نکالا جائے۔ تاہم، کوروناوائرس کی نئی اقسام کی شناخت میں برطانیہ این وی اے پی کے ذریعے پاکستان کی مدد کرے گا۔ تفصیلات کے مطابق، برطانوی حکومت نے پاکستان سے کہا ہے کہ وہ فی الوقت یہ بتانے سے قاصر ہے کہ پاکستان کو کب ریڈ لسٹ سے نکال کر اس سے سفری پابندی ہٹائی جائے گی کیوں کہ برطانیہ 19 جولائی سے پابندیاں ختم کرکے حالات معمول کے مطابق لانے پر کام کررہا ہے۔ پاکستان سے ریڈ لسٹ سفری پابندیاں اٹھانے کا معاملہ گزشتہ ہفتے وزیراعظم عمران خان اور ومبلڈن کے وزیر برائے جنوبی ایشیا لارڈ طارق احمد کے درمیان زیربحث آیا تھا، جب وہ پاکستان کے دورے پر آئے تھے۔ برطانوی حکام ، حکومت پاکستان کو آگاہ کرچکے ہیں کہ سفری پابندی خالصتاً اعدادوشمار کی بنیاد پر عائد کی گئی ہیں کیوں کہ یہ پابندی بھارت، بنگلادیش، سری لنکا سمیت درجنوں دیگر ممالک پر بھی عائد کی گئی ہے۔ برطانوی حکومت کا کہنا ہے کہ وہ سفری پابندیاں اسی صورت اٹھائیں گے جب سائنس دان ایسا کرنے کا مشورہ دیں گے۔ ذرائع کا کہنا تھا کہ پابندی رواں برس کے اختتام یا پھر کم از کم تین ماہ تک برقرار رہ سکتی ہے۔ حکومت پاکستان نے برطانوی حکومت کو پیغام پہنچادیا ہے کہ پاکستان جلد از جلد اس فہرست سے باہر نکلنے کا خواہاں ہے اور برطانوی حکومت کو اس کے لیے وقت طے کرنا چاہیئے۔ جب کہ برطانوی حکومت نے اعلان کیا ہے کہ پاکستان ان ترجیحی ممالک کی فہرست میں شامل ہے جنہیں نئے ویریئنٹ کی جانچ پڑتال کے پلیٹ فارم (این وی اے پی) کے پہلے مرحلے میں فائدہ ہوگا۔

 

Sharing is caring!

Comments are closed.