کمپنیوں کو وارننگ جاری کر دی

سعودی حکومت نے موسم گرما میں کمپنیوں کو وارننگ جاری کر دی
15 جون سے کارکنان سے کھُلے مقامات پر 12 سے 3 بجے تک کام کروانے پر پابندی عائد ہو گی

ریاض( جون 2021ء) سعودی عرب کا شمار دُنیا کے گرم ترین خطوں میں ہوتا ہے۔ جبکہ گرمی کے دِنوں میں تو یہاں کی دھرتی آتش فشاں کی طرح سے کھولنے لگتی ہے۔ سعودیہ میں گزشتہ چند سالوں کے دوران ہر شعبے میں انقلابی اصلاحات متعارف کرائی جا رہی ہیں جس سے یہاں کے مقامی باشندے اور غیر ملکی ملازمین کی فلاح و بہبود میں خاصی ترقی دیکھنے کو مِلی ہے۔گزشتہ سال کی طرح اس سال بھی سعودی وزارت افرادی قوت و سماجی بہبود نے اعلان کر دیا ہے کہ 15 جون20 20ء سے کسی بھی ملازم سے دوپہر بارہ بجے سے لے کر سہ پہر 3 بجے تک کھلے آسمان تلے مزدوری نہیں کروائی جائے گی کیونکہ ان مہینوں میں شدت کی گرمی پڑتی ہے جس سے ملازمین کی صحت اور زندگیوں کو خطرات لاحق ہو سکتے ہیں۔ سعودی وزارت کا کہنا ہے کہ منگل کے روز سے کھُلے مقامات پر ان تین گھنٹوں کے دوران کارکنان سے ڈیوٹی لینے کی اجازت نہیں ہو گی۔یہ پابندی 15 ستمبر 2021ء تک جاری رہے گی۔اس فیصلے کو اس فیصلے کو لاکھوں ایسے ملازمین نے بہت خوشی کی نظر سے دیکھا ہے جو تعمیراتی شعبے سے منسلک ہونے کے سبب تپتی سڑتی دوپہروں میں کھْلے آسمان تلے کام کرنے پر مجبور ہیں۔واضح رہے کہ یہ پابندی ہر سال عائد کی جاتی ہے۔متعلقہ آجروں کو ہدایت کی گئی ہے کہ 12 سے 3بجے کے پابندی والے اوقات کے مدنظر نئے اوقات کار مقرر کر دیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.