کوششیں رنگ لے آئیں

سعودی فرمانروا نے 65 پاکستانی قیدیوں کی سزا معاف کر دی

سعودیہ میں تعینات پاکستانی سفیر لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) بلال اکبر نے بتایا کہ رہا کیے گئے قیدی ریاض کی جیل میں قید تھے
جدہ( 23 جون 2021ء) وزیر اعظم عمران خان کی سعودیہ کی جیلوں میں قید پاکستانیوں کی رہائی کے لیے کوششیں رنگ لے آئیں ۔ سعودی حکومت نے مزید 65 پاکستانی قیدیوں کی سزائیں معاف کر دیں۔ سعودیہ میں تعینات پاکستانی سفیر لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) بلال اکبر نے بتایا ہے کہ شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی ہدایت پر قیدیوں کو دی گئی معافی کے تحت 65 پاکستانی قیدیوں کی باقی سزا بھی معاف کی گئی ہے۔ سفیر پاکستان نے پیر کی رات کی ٹویٹ کی کہ ’شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی ہدایت کے تحت ریاض کی جیل میں موجود 65 پاکستانی قیدیوں کی سزا معاف کی گئی ہے‘۔اُردو نیوز کے مطابق لیفٹیننٹ جنرل (ریٹائرڈ) بلال اکبر نے کچھ روز قبل بھی بتایا ہے کہ رمضان کے مہینے سے لے کرمئی کے مہینے تک 49 پاکستانی قیدیوں کو سعودی جیلوں سے رہا کر دیا گیا ہے جبکہ مزید 53 قیدیوں کی رہائی بھی عنقریب ممکن ہے۔ پاکستانی سفیر نے چار قیدیوں کے ذمے ہرجانے کی رقم ادا کرنے پاکستانی مخیر حضرات کا خصوصی شکریہ ادا کیا ہے جن کی وجہ سے حق خاص کے چار کیسز حل ہو گئے ہیں۔  مئی میں وزیراعظم عمران خان کے سعودی عرب کے دورے کے دوران دونوں ممالک نے سزا یافتہ پاکستانی قیدیوں کے تبادلے کے معاہدے پر دستخظ کیے تھے۔سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان نے سنہ 2019 میں پاکستان کے دورے میں دو ہزار 17 پاکستانیوں کو سعودی جیلوں سے رہا کرنے کا اعلان کیا تھا۔ پاکستانی حکام کے مطابق اس اعلان کے بعد 12 سو زائد پاکستانیوں کو سعودی جیلوں سے رہا کیا جا چکا ہے۔ لیفٹیننٹ جنرل ریٹائرڈ بلال اکبر کا کہنا ہے کہ سعودی عرب میں قید گیارہ سو قیدیوں کی واپسی جلد ممکن نہیں ہے۔ اس معاملے میں ابھی 2 سے 3 ماہ مزید لگ سکتے ہیں ۔ان کا کہنا تھاکہ سعودی عرب کی مختلف جیلوں میں اس وقت ڈھائی ہزار کے لگ بھگ پاکستانی شہری مختلف جرائم کی سزا کاٹ رہے ہیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.