امارات کے پاکستانی سفارت خانوں سے ہیں

’اوور سیز پاکستانیوں کو سب سے زیادہ شکایات سعودیہ اور امارات کے پاکستانی سفارت خانوں سے ہیں‘
وزیر اعظم عمران خان نے بتایا کہ سعودیہ اور یواے ای میں مقیم پاکستانی سب سے زیاد ترسیلات بھجواتے ہیں، اس کے باوجودسفارتی عملہ ان کے ساتھ اچھا رویہ نہیں اپناتا ہے

دُبئی(6 مئی2021ء) پاکستان کے بعد دُنیا بھر میں سب سے زیادہ پاکستانی سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات میں مقیم ہیں، جن کی مجموعی گنتی 40 لاکھ سے زائد ہے۔ ان افراد کی جانب سے ہر ماہ کھربوں روپے کی ترسیلات پاکستان کو بھیجی جاتی ہیں، جس کی وجہ سے ملکی معیشت کو بڑا سہارا مل رہا ہے۔ تاہم پاکستانی وزیر اعظم عمران خان نے بتایا ہے کہ اوور سیز پاکستانیوں کو سب سے زیادہ شکایات سعودیہ اور امارات میں قائم پاکستانی سفارت خانوں سے ہے۔اُردو نیوز کے مطابق وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ ’بیرونی ممالک میں پاکستانی سفارت خانے جس طرح سے چل رہے ہیں اب ایسے مزید نہیں چل سکتے۔‘گزشتہ روز اسلام آباد میں پاکستانی سفیروں سے آن لائن خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم کا مزید کہنا تھا کہ ’بدقسمتی سے پاکستانی سفارت خانوں کے عملے کا رویہ ہم وطنوں کے ساتھ بہتر نہیں۔‘انہوں نے سعودی عرب اور متحدہ عرب امارات میں پاکستانی سفارت خانوں کی صورت حال کو سب سے زیادہ خراب قرار دیتے ہوئے کہا کہ ’پاکستان میں سب سے زیادہ ترسیلات بھی ان ہی دو ممالک سے آتی ہیں۔‘وزیراعظم نے چند روز قبل سعودی عرب میں پاکستان کی سفیر کی تبدیلی کا حوالہ دیتے ہوئے کہا کہ ’وہاں سے شکایات موصول ہو رہی تھیں۔‘ بقول ان کے ’سٹیزن پورٹل پر بھی اوورسیز پاکستانیوں نے شکایات درج کروائیں۔‘وزیراعظم کے مطابق ’جب جاننے والے پاکستانیوں سے فیڈ بیک منگوایا تو اسے دیکھ کر حیران رہ گیا۔‘عمران خان نے بتایا کہ ’سعودی عرب میں پاکستانی سفارت خانے کے اہلکاروں کے بارے میں آنے والی شکایات کی تحقیقات ہو رہی ہیں اور ایک ہفتے تک نتیجہ سامنے آجائے گا۔

Sharing is caring!

Comments are closed.