حوالے سے تیاریاں شروع ہو گئیں

مسجد الحرام میں رمضان شریف کے حوالے سے تیاریاں شروع ہو گئیں
میڈیا ذرائع کے مطابق سعودی مملکت میں افطار کیمپ اور افطار خیمے لگانے کی اجازت ہو گی

مکہ مکرمہ(ا۔18 مارچ2021ء) سعودی عرب میں گزشتہ سال کورونا وبا کی وجہ سے افطار کیمپ اور افطار خیمے نہیں لگائے گئے تھے۔ ہر سال لگنے والے ان افطار خیموں کی وجہ سے غیر ملکی کارکنان کا بہت فائدہ ہوتا تھا، جو یہاں سے افطار کر کے اپنا اچھا خاصا خرچ بچا لیتے تھے۔ تاہم پچھلی بار ایسا نہ ہونے پر ان کی پریشانی میں اضافہ ہو گیا تھا۔اس حوالے سے سعودی میڈیا کے ذرائع نے اچھی خبر سُنا دی ہے۔اُردو نیوز کے مطابق ذرائع کا کہنا ہے کہ سعودی مملکت میں اس بار رمضان المبارک میں افطار کیمپ اور افطار خیمے لگانے کی اجازت ہو گی۔ تاہم اس دوران ایس او پیز کے حوالے سے سخت شرائط بھی پوری کرنا ہوں گی۔ سعودی عرب میں رمضان کے دوران بڑے بڑے شہروں میں افطارکیمپ اور افطار خیمے لگائے جاتے ہیں۔ہوٹلوں اور مساجد کے احاطوں میں بھی اس کا انتظام کیا جاتا ہے۔ مقامی شہریوں نے سوال اٹھایا ہے کہ کیا اس سال رمضان کیمپ لگانے کی اجازت ہوگی یا گزشتہ برس کی طرح کورونا وبا کی وجہ سے اس سال بھی افطار خیموں پر بندش برقرار رہے گی؟ باخبر ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ اس سال رمضان کیمپ لگانے کی منظوری دی جائے گی تاہم اس حوالے سے کچھ پابندیاں ہوں گی۔اس کا باقاعدہ اعلان ایک ہفتے کے اندر ہوجائے گا۔ بعض ذرائع کا کہنا ہے کہ ابھی تک رمضان کے دوران افطار خیموں اور کیمپوں کے اجازت نامے جاری کرنے کی بابت کوئی حتمی فیصلہ نہیں ہوا۔دوسری جانب مسجد الحرام میں رمضان کی تیاریاں شروع کر دی گئی ہیں۔ اس مقصد کے لیے انتظامیہ کا خصوصی اجلاس سیکریٹری ڈاکٹر سعد المحیمید کی صدارت میں ہوا ہے۔ مسجد الحرام کے مختلف اداروں اور شعبوں نے زائرین کی خدمت اور سہولت کے لیے جو سکیمیں تیار کی تھیں ان کی تفصیلات پیش کی گئیں خصوصا صحت انتظامات پر زیادہ زور دیا گیا۔ انتظامیہ کے عہدیداروں نے نماز اور عمرے کے لیے آنے والوں میں صحت آگہی پروگرام چلانے کی ضرورت اجاگر کی۔ ڈاکٹر المحیمید نے بتایا کہ انتظامیہ زائرین کو مناسب اور ضروری سہولتیں فراہم کرے گی۔ اس حوالے سے کسی قسم کی کوئی کوتاہی نہیں ہوگی۔ حکومت کی طرف سے بھرپور مدد مل رہی ہے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.