میری خالہ کی بیٹی ان پڑھ تھی مگر بہت خوبصورت تھی

میری خالہ کی بیٹی ان پڑھ تھی مگر بہت خوبصورت تھی
وہ کچن میں کھڑی پیاز کا ٹ رہی تھی۔ میں نےدیکھا کہ اس کی آ نکھیں سرخ تھیں اور مسلسل آنسو بہہ رہے تھے میں نے ہمدردی سے پو چھا کہ رو رہی ہو کیا؟ بھیگی آ نکھوں سے ہنستی ہوئے بولی نہیں تو ۔ پیاز کاٹ رہی تھی ۔ بہت ہی کڑوا ہے۔ میں نے کہا خالہ امی بلا رہی ہے۔ رشتے دیکھنے والے لوگ آ گئے ہیں۔ اس نے کہا ٹھیک ہے اس نے پہلے آنکھیں صاف کیں اور پھر ٹرے میں کو لڈ ڈرنک فروٹ وغیرہ رکھ کر دپٹہ ٹھیک سے اوڑھا اور باہر کی طرف چل دی

میں نے اس کے جانے کےبعد ٹیبل پر پیاز کی طرف دیکھا جو آدھا کٹا ہوا تھا۔ باقی پیاز میں کاٹنے لگا اور حیرت کا جھٹکا مجھے تب لگا۔ جب پورا پیاز کٹ گیا اور نہ میری آ نکھیں جلیں اور نہ ان میں پانی آ یا۔ پیاز تو بالکل بھی کڑوا نہیں تھا۔ میں نے اس کے قدموں کی آہٹ سن کر دیکھا تو وہ ٹرے میں بسکٹ بھی رکھ رہی تھی اور خاموش آنکھوں کے ساتھ میری طرف دیکھ رہی تھی اور میری آ نکھوں میں آنکھوں ڈال کر دھیمے لہجے میں کہنے لگی پیاز تو کڑوا نہیں ہو تا عمر بھائی عورت کی زندگی کڑ وی ہوتی ہے۔ کیا ہوا یار زندگی کو اچھی بھلی تو ہے والدین بہن بھائی اچھی تعلیم عزت اور زندگی کی ہر سہولت ہے۔ پھر یہ زندگی سے ناشکری کیوں عمر بھائی آپ نہیں سمجھیں گے۔ اس نے چائے اٹھائی اور جانے لگی۔ اور پھر میں نے کہا کہ سمجھا ؤ نا ۔ اس نے کہا آپ میرے ساتھ آ ئیں وہ چائےلے کر کمرے میں چلی گئی اور میں کھڑکی سے اند رکا منظر دیکھنے لگا۔موٹے موٹے صوفے پر بیٹھی تین عورتیں کسائیوں کی طرح نادیہ کو دیکھ رہی تھیں۔ میں کھڑکی کے باہر کھڑا تھا مگر وہ نظر کی چوبھن مجھے بھی بے قرار کر گئی۔ سر جھکائے بیٹھی نادیہ پر مجھے بہت ترس آرہا تھا۔ ایک عورت نے چھبتے الفاظ میں پو چھا کہ بہن آپ کے خاندان میں اور کوئی رشتہ نہیں ہے۔ خالہ نے سادگی سے کہا جی بہت سے بچے ہیں فیملی میں اچھا یہ لڑ کا کو ن ہے جس نے دروازہ کھو لا تھا وہ میرے بارے میں پو چھ رہی تھی۔ میرا بھانجھا ہے سی ایس ایس کیا ہے ابھی بہت جلد ہی ٹریننگ پر چلا جائے گا۔ خالہ کے لہجے میں محبت ہی محبت تھی دیکھو بہن اگر خاندان میں اتنے اچھے لڑ کے ہیں۔

 

Sharing is caring!

Comments are closed.