سائنسدانوں نے وزن کم کرنے والی دوائی بنا لی

سائنسدانوں نے وزن کم کرنے والی دوائی کو موٹاپے پر قابو پانے کے لئے گیم چینجرقرار دیا

سائنس دانوں نے موٹاپےکے علاج میں جسم کے بھوک کے نظام کو ہائی جیک کرنے والی دوائی سیماگلوٹائیڈ کوگیم چینجرقرار دیا،تحقیق سےپتہ چلتا ہے کہ اس سے جسمانی وزن میں 20 فیصد تک کمی ہوسکتی ہے۔یہ تحقیق نیو انگلینڈ جرنل آف میڈیسن میں شائع ہوئی ہے، جس میں 16 ممالک کے تقریبا 2،000 افراد کو شامل کیا گیا۔تحقیق کےنتائج سے یہ معلوم ہوا ہے کہ جن لوگوں نےسیما گلوٹائڈ لی ان میں سے ایک تہائی کے وزن میں 20فیصدکی کمی ہوئی۔تحقیق کے اعدادوشمار سےمعلوم ہوا ہے کہ دوائی لینے والوں میں سے تین چوتھائی افراد کے وزن میں 10 فیصد سے کمی ہوئی۔یہ دوا فی الحال ذیابیطس کے علاج کے لئے استعمال کی جاتی ہے اور کیلوری ان ٹیک کو کم کرنے کے لئےبھوک کے ضابطے میں ردوبدل کرنے کا کام کرتی ہے۔اس مطالعے کے مرکزی مصنفین میں سے ایک یونیورسٹی کالج لندن سے تعلق رکھنے والی راکیل بیٹرہم نے اس تحقیق کواہم پیشرفت قرار دیاہے۔

 

Sharing is caring!

Comments are closed.