سعودی شاہی خاندان کو ایک اور صدمہ ، دو روز بعد ہی ایک اور گہرا صدمہ

سعودی شاہی خاندان کو ایک اور صدمہ ، دو روز بعد ہی ایک اور شہزادی چل بسی
دو روزقبل شہزادی قماشہ کا انتقال ہوا تھا ، جبکہ گزشتہ روز شہزادی مضاوی بنت عبداللہ انتقال کر گئیں

ریاض سعودی شاہی خاندان کوایک ماہ کے اندرچوتھا صدمہ سہنا پڑ رہا ہے۔ اس وقت سعودی مملکت میں سوگ کا سماں ہے۔ شاہی خاندان اور سعودی عوام دْکھ سے دوچار ہیں۔ اس کی وجہ سعودی عرب کے شاہی خاندان سے تعلق رکھنے والی ایک اور خاتون کا گزشتہ روز انتقال کر جانا ہے۔ابھی شاہی خاندان دو روز قبل شہزادی قماشہ کی وفات کا سوگ منا رہا تھا کہ اس پر غم کا ایک اور پہاڑ ٹوٹ پڑا ہے۔ سعودی پریس ایجنسی کے مطابق سعودی شہزادی مضاوی بنت عبداللہ بن محمد ابن جلوی السعود گزشتہ روز انتقال کر گئی ہیں۔ ان کی نماز جنازہ آج ادا کی جائے گی۔ واضح رہے کہ دو روز قبل شہزادی قماشہ انتقال کر گئی تھیں۔ مرحومہ خاتون نہار بن سعود بن عبدالعزیز السعود کی والدہ تھیں۔ ان کی نماز جنازہ کل ریاض میں ادا کی گئی تھی، جس کے بعد انہیں مقامی قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا۔
اسی ماہ 6 جولائی کو شاہی خاندان کے رُکن اور معروف سعودی شہزادے خالد بن سعود بن عبدالعزیزگزشتہ روز انتقال کر گئے تھے، ان کی عمر 95 برس تھے جن کی نماز جنازہ ریاض میں ادا کرنے کے بعد انہیں مقامی قبرستان میں سپرد خاک کردیا گیا تھا۔گزشتہ ماہ 28 جون کو معروف سعودی شہزادے بندر بن سعد بن محمد بن عبدالعزیز بن سعود بن فیصل السعود انتقال کر گئے تھے۔ جن کی نماز جنازہ29 جون کوبعد از نماز ظہر ریاض میں اداکر دی گئی، پھرانہیں مقامی قبرستان میں سپرد خاک کر دیاگیا۔واضح رہے کہ 4 جون کو بھی شاہی خاندان کے رُکن اور معروف شہزادہ سعود بن عبداللہ بن فیصل بن عبدالعزیز السعود انتقال فر ما گئے تھے۔ جن کی نماز جمعہ ریاض میں ادا کرنے کے بعد انہیں مقامی قبرستان میں سپرد خاک کر دیا گیا تھا ۔ اس سے قبل26 فروری کو سعودی شہزادہ طلال بن سعود بن عبدالعزیز انتقال کر گئے تھے، اُن کی نماز جنازہ میں سعودی فرماں روا شاہ سلمان بن عبدالعزیز اور ولی عہد محمد بن سلمان بھی شریک ہوئے تھے۔ اس کے علاوہ شہزادہ عبداللہ بن عبدالعزیز، شہزادہ مقرن بن عبدالعزیز، گورنر ریاض شہزادہ فیصل بن بندر، مفتی اعلیٰ شیخ عبدالعزیز بن عبداللہ آل الشیخ شہزادہ طلال کے بھائی مشعل، منصور، نایف، سلمان، سطام، مشاری، یزید، سیف الاسلام، جلوی، مصعب، نہار، یوسف، عبدالکریم اور حسام بھی شریک ہوئے۔

Sharing is caring!

Comments are closed.