عیدالاضحی کے موقع پربیرون ملک بیروزگار ہونیوالے پاکستانیوں بارے افسوسناک خبرآگئی

عیدالاضحی کے موقع پربیرون ملک بیروزگار ہونیوالے پاکستانیوں بارے افسوسناک خبرآگئی

کورونا کی عالمی وبا کے باعث خلیجی ممالک میں بے روزگار ہونے والے ہزاروں پاکستانی عیدالاضحیٰ پر بھی وطن واپس نہیں پہنچ سکے۔ بہت سےپاکستانیوں کے پاس ٹکٹ خریدنے کے پیسے نہیں جبکہ بیشتر کو شکایت ہے کہ ان کو پی آئی اے کا ٹکٹ دستیاب نہیں ہوسکا۔کورونا وبا کے بعد سے حکومت پاکستان کا دعویٰ ہے کہ ایک ہزار 85 خصوصی پروازوں کے ذریعے دو لاکھ 50 ہزار سے زائد پاکستانیوں کو وطن واپس لایا گیا ہے جن میں اکثریت ان ورکرز کی ہے جن کی نوکریاں یا تو ختم ہو گئی ہیں یا پھر ان کی کمپنیوں نے ان کو رخصت دے دی ہے۔وزارت سمندر پار پاکستانیز
کے اعداد و شمار کے مطابق صرف 21 جون سے 8 جولائی کے درمیان ایک لاکھ سے زائد پاکستانیوں کو وطن واپس لایا گیا جبکہ اس سے قبل یکم اپریل سے 20 جون کے دوران دو لاکھ 42 ہزار سے زائد پاکستانی وطن واپس پہنچے تھے۔اس کے باوجود 47 ہزار رجسٹرڈ اور کم و بیش اتنے ہی غیر رجسٹرڈ افراد ہیں جن کی نوکریاں ختم ہو چکی ہیں اور وہ وطن واپس آنا چاہتے ہیں لیکن ان کو طرح طرح کے مسائل درپیش ہیں جس کی وجہ سے وہ یہ عید کسم پرسی کی حالت میں دیار غیر میں منانے پر مجبور ہوں گے۔نجی خبررساں ادارےنے سعودی عرب، متحدہ عرب امارات، کویت، قطر اور دیگر ممالک میں مقیم پاکستانیوں سے بات کی ہے جنہوں نے اپنے حالات سے آگاہ کیا ہے۔سعودی عرب میں مقیم نور احمد نے بتایا کہ وہ ریاض میں مقیم ہیں۔ ’وطن واپسی کے لیے کوشش کے باوجود ٹکٹ نہیں مل رہا۔ جہاں بھی جائیں جس سے بھی رابطہ کریں وہ ریفرنس مانگتا ہے۔ پی آئی اے کے ٹکٹ بلیک میں مل رہے ہیں۔‘ان کا کہنا تھا کہ ’معمول کے مطابق یک طرفہ ٹکٹ ایک ہزار ریال کا مل جاتا تھا اب دو ہزار ریال میں بھی نہیں مل رہا۔ یہ تو وہ قیمت ہے جو پی آئی اے وصول کرتا ہے لیکن ایجنٹس یہی ٹکٹ تین ہزار ریال یعنی ایک لاکھ 10 ہزار سے زائد پاکستانی روپے میں بیچتے ہیں۔‘سعودی عرب ہی میں مقیم ایک اور شہری محمد سعید جو کہ عمر رسیدہ ہیں۔ انہوں نے اردو نیوز کو بتایا کہ ان کا خروج لگ چکا ہے۔ ’ایمبیسی میں بہت دفعہ کوشش کی، ٹکٹ نہیں ملا۔ پی آئی اے والوں سے رابطہ کرنے کا کہا جاتا ہے لیکن وہ کہیں بھی ٹکٹ نہیں دیتے۔ مجبوراً پاکستان میں اپنے خاندان سے کہا ہے کہ وہ ٹکٹ کا بندوبست کرکے دیں۔ معلوم ہوا ہے کہ وہاں بھی ٹکٹ ایجنٹس ایک لاکھ دس ہزار روپے مانگ رہے ہیں۔‘ان کے مطابق ’میرے کیمپ کے بہت سے ساتھی صرف اس وجہ سے پاکستان نہیں جا پا رہے کہ ان کے پاس ٹکٹ خریدنے کے پیسے نہیں ہیں۔‘دوسری جانب متحدہ عرب امارات میں مقیم پاکستانیوں میں سے بہت سے افراد کے اقامے بھی ختم ہو چکے ہیں اور ارباب (کمپنی مالک) اقامہ کی تجدید اس لیے نہیں کروا رہے کہ ان کو معلوم ہی نہیں کہ کام دوبارہ کب شروع ہوگا۔بلال احمد ڈیڑھ سال پہلے ایک کنسٹرکشن کمپنی میں لیبر کے ویزہ پر دبئی آئے تھے۔ ان کا کہنا ہے کہ’’میرے اقامہ کے ابھی چھ ماہ رہتے تھے تو کورونا کی وبا آ گئی۔لاک ڈاؤن کی وجہ سے تمام بزنس رک گئے۔ ہم جو کماتے ہیں وہ اپنے اہل خانہ کو بجھوا دیتے تھے۔ اب واپس کیسے جائیں جبکہ کمپنی بھی پیسے نہیں دے رہی کہ ٹکٹ خرید سکیں۔‘ان کا کہنا ہے کہ ’اب میرے پاس اور میرے ساتھیوں کے پاس واپسی کا ٹکٹ تو کیا کھانے اور رہائش کے لیے بھی پیسے نہیں ہیں۔ ہم واپس اپنے ملک جانا چاہتے ہیں۔ عید کا موقع ہے۔ میرے ماں باپ اور بیوی بچے انتظار کررہے ہیں۔‘محمد سلیم جو کہ دبئی میں ٹیکسی ڈرائیور ہیں۔ انہوں نے بتایا کہ متحدہ عرب امارات میں ٹیکسی اپنی ملکیت نہیں ہوتی۔ دو تین بڑی کمپنیوں کے پاس ڈرائیورنگ کریں تو گزارا ہوتا ہے اور کمیشن کی صورت میں تنخواہ ملتی ہے۔ جس وقت آپ گاڑی نہیں چلاتے کمپنی آپ کو تنخواہ نہیں دیتی۔ ‘ان کے مطابق ’کورونا میں لاک ڈاؤن کی وجہ سے ٹیکسی کا کام تو مکمل طور پر بند ہے۔ جس کی وجہ سے ٹیکسی ڈرائیور مشکلات کا شکار ہیں۔ واپس کی خواہش ہے لیکن کمپنیاں اتنے ورکرز کو ٹکٹ دینے کےلیے بھی تیار نہیں ہیں۔ چھ ماہ سے کام بند ہونے کی وجہ سے ہماری تمام جمع پونجی ختم ہوچکی ہے۔‘دوسری جانب قطر میں موجود پاکستانیوں کے حالات زیادہ خراب ہیں۔ اشتیاق احمد دوحہ میں ایسے علاقے میں گروسری سٹور چلاتے ہیں جہاں بہت سے لیبر کیمپ ہیں۔ ان کے زیادہ تر گاہک عام ورکرز ہیں، جو ان سے ادھار پر چیزیں لیتے ہیں اور مہینے کے آخر پر جب ان کو تنخواہ ملتی تو ادائیگی کرتے ہیں۔انہوں نے بتایا کہ کورونا کے باعث لاک ڈاؤن ہوا تو ابتدا میں اپنی دکان بند رہی جس سے نقصان ہوا۔ دکان کھلی ورکرز نے ادھار کا سلسلہ جاری رکھا۔ ان کو تنخواہ مل نہیں رہی اور میرے ہزاروں قطری ریال کے واجبات بقایا ہیں اور ملنے کی کوئی امید فی الحال نظر نہیں آ رہی۔ ان کا کہنا ہے کہ ’میرے ساتھ میری فیملی بھی رہائش پذیر تھی کیونکہ اب حالات بدل چکے ہیں۔ کوئی مستقبل نظر نہیں آ رہا۔ ہم پاکستان جانا چاہتے ہیں لیکن پوری فیملی کے ٹکٹ خریدنا موجودہ حالات میں ممکن نہیں۔‘اس صورت حال پر وزارت سمندر پار پاکستانیز کے حکام کا کہنا ہے کہ پاکستانی سفارت خانے اور ویلفئیر اتاشی پاکستانیوں کے مسائل حل کرنے ان کی نوکریوں کی بحالی اور وطن واپسی کے لیے کوشاں ہیں۔ سات سو 12 پاکستانیوں کو متحدہ عرب امارات سے سرکار کی جانب سے ٹکٹ کی فراہمی ممکن بنائی گئی جبکہ دیگر ممالک سے بھی ان پاکستانیوں کو واپس آنے میں معاونت کی گئی جن کے پاس ٹکٹ کے پیسے نہیں ہیں۔وزارت کا کہنا ہے کہ جن پاکستانیوں کے اقامے ختم ہوئے ان میں توسیع کے لیے بھی متعلقہ حکومتوں سے رابطے میں ہیں۔دوسری جانب پاکستانی ورکرز کا کہنا ہے کہ بہت سے پاکستانیوں کو بے روزگار کرنے میں خلیجی کمپنیوں کے بجائے پاکستانی کمپنیوں کا ہاتھ ہے جو اربوں کے منصوبے مکمل کروانے کے باوجود چھتوے ٹھیکیداروں کو ادائیگیاں نہیں کر رہے جس سے ہزاروں افراد کے گھروں کے چولہے ٹھنڈے ہوگئے ہیں۔

Sharing is caring!

Comments are closed.