سعودی عرب اور چین سے پاکستان کے لیے بڑی خوشخبری۔۔!! دونوں ملکوں نے پاکستان کا دوست ہونے کا حق ادا کر دیا

اسلام آباد (نیوز ڈیسک ) سعودی ارب اور چین بھی پاکستان کے قرضوں کی ادائیگیاں مؤخرکرنے پر رضامند ہو گیا۔تفصیلات کے مطابق پیرس کلب کے بعد سعودی عرب اور چین نے بھی یکم مئی سے 31 دسمبر تک پاکستان کے قرضوں کی ادائیگی موخر کرنے کی یقین دہانی کروا دی ہے۔ذرائع کے مطابق قرض کی ادائیگی یا موخر ہونے سے

پاکستان کو مجموعی طور پر ایک ارب 80 کروڑ ڈالرز کا ریلیف ملے گا اور اس سلسلے میں باقاعدہ اعلان آئندہ ہفتے ہوگا۔اس کے علاوہ متحدہ عرب امارات سے بھی قرض کی ادائیگی یا موخر کرنے کے لیے بات چیت جاری ہے اور آئندہ بجٹ یہ ادائیگیاں موخر سمجھ کر بنایا جارہا ہے۔اس سے قبل ترقی پذیر ممالک کو قرض فراہم کرنے والے ممالک پر مشتمل گروپ پیرس کلب نے پاکستان کا قرضہ مؤخر کرنے کا اعلان کیا ۔پیرس کلب کی جانب سے جاری اعلامیے کے مطابق پاکستان قرضوں کی ادائیگی مؤخر کرنے کی سہولت سے فائدہ اٹھانے کا اہل ہے جبکہ جی ٹوئنٹی ممالک بھی قرضوں کو مؤخر کرنے کی توثیق کرچکے ہیں۔پیرس کلب کے مطابق قرض فراہم کرنے والے ممالک کے نمائندوں نے پاکستان کا قرضہ یکم مئی سے 31 دسمبر تک مؤخر کرنے کی منظوری دے دی ہے۔پیرس کلب کے مطابق کورونا وائرس سے نمٹنے کے لیے پاکستان کا قرضہ مؤخر کیا گیا ہے اور اس سے پاکستان کو قرضوں کی ادائیگی میں ریلیف مل سکے گا۔پیرس کلب نے امید ظاہر کی ہے کہ اس سے پاکستان کو کورونا وائرس اور اس سے پیدا ہونے والی صورت حال سے نمٹنے میں مدد ملے گی۔ذرائع کے مطابق پیرس کلب سے قرضے مؤخرکرنے سے پاکستان کو 1 ارب 10کروڑ ڈالرکا ریلیف ملے گا۔اس سے قبل پاکستان کوپیرس کلب کیقرضوں کی رواں سال جون تادسمبر ادائیگیاں کرنی تھیں،جی 20 ممالک قرضے مؤخر کرنے کی پہلے ہی منظوری دے چکے ہیں۔خیال رہے کہ عالمی مالیاتی فنڈ(آئی ایم ایف) نے یہ ادائیگیاں مؤخر کرنے کی سفارش کی تھی جبکہ وزیراعظم عمران خان نے بھی ترقی پذیر ملکوں کے قرض معاف کرنے یا ادائیگیاں مؤخر کرنے کی درخواست کی تھی۔

Sharing is caring!

Comments are closed.